تازہ ترین ضیائے بخشش  

صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم

سلام

صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
حبیب رب امام المرسلینﷺ ہو
تم ہی تو عرش کے مسند نشین ہو
تم ہی تو سرور دنیا و دیں ہو،
تم ہی تو رحمۃً للعلمینﷺ ہو
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
نبئ مصطفی حامد ممجدﷺ
خدا نے کردیا جن کو محمدﷺ
فرشتوں سے ہوئے ہیں وہ مؤید،
خدا کا حکم آیا ہے مؤکد
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
مثال مصطفیﷺ آیا کوئی کب،
عیاں تھا مرتبہ اسریٰ کی اس کی شب
سلامی دے رہے تھے انبیاء﷩ جب،
تھے اہل عرش بھی نغمہ سرا سب
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
تم ہی ہو راز دارِ سرّ وحدت،
تم ہی ہو مالکِ ہر جمع و کثرت
تم ہی تو ہو جہاں میں رب کی نعمت
دو عالم کے لئے ہو تم ہی رحمتﷺ
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
شہ ہر دوسر تشریف لائے،
حبیب کبریاﷺ تشریف لائے
امام الانبیاءﷺ تشریف لائے،
محمد مصطفیﷺ تشریف لائے
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
فضا پر کیف ہے نوری جھڑی ہے،
تبسم ریز ہر گل کی لڑی ہے
دوشالا ہر کلی اوڑھے کھڑی ہے
نبیﷺ تشریف لائے وہ گھڑی ہے
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
جہاں میں بول بالا ہو رہا ہے،
وَرَفَعْنَا ذِکْرَکَ کا شور سا ہے
عجب نوری سماں سا بندھ گیا ہے،
ہر اک اب جھوم کر یہ پڑھ رہا ہے
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
تمھارے در پہ سر میرا جھکا ہے
نظر کے سامنے عرش عُلیٰ ہے
زمیں سے آسماں تک نور سا ہے،
ہر اک جانب سے بس یہی صدا ہے
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
عجب کچھ نور سے پھیلے ہوئے ہیں،
حجابات نظر اُٹھے ہوئے ہیں
تھے جتنے فاصلے سمٹے ہوئے ہیں،
در آقاﷺ پہ ہم آہی گئے ہیں
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
امام اعظم﷜ کا صدقہ شاہِ امکاں،
بہ فیض سیدی احمد رضا خاں﷫
ہر اک کے دل کا پورا ہو یہ ارماں،
پہنچنا ہو درِ اقدس پہ آساں
صَلٰوۃٌ یَا رَسُوْلَ اللہْ عَلَیْکُم
سَلَامٌ یَا رَسوْلَ اللہْ عَلَیْکُمْ
شہ برکات حافؔظ پر نظر ہو،
بہ لطف غوث﷜، طیبہ کا سفر ہو
سنہری جالیوں پر جبکہ سر ہو،
زباں پر بس یہ، شاہ بحروبرﷺ ہو

...

ہے جو نعمان سجا تیری جبیں پر سہرا

سہرا

یہ تقریب شادی برادر انجنیئر نعمان رضا خاں برکاتی زید حبہ ولد مفتی احمد میاں برکاتی

(از: محمد حسّان رضا خاں نوری، برادر نوشاہ) اصلاح شدہ: مفتی احمد میاں حافؔظ البرکاتی

ہے جو نعمان سجا تیری جبیں پر سہرا
باعث نگہت و عشرت ہے منور سہرا
رشک سے کیوں نہ تکیں یہ مہ و اختر سہرا
سب کا محبوب نظر ہے یہ مطہر سہرا
آرزو بہن کی ارمانِ برادر سہرا
راحت جان و سکونِ دلِ مادر سہرا
چومتا ہے ترے رخسار و جبیں کو پیہم
در حقیقت ہے مقدر کا سکندر سہرا
فیض مرشد سے یہ لایا ہے بہاروں کا پیام
ہو مبارک تجھے محبوب و معطر سہرا
انکساری سے جو جھکتا ہے کہیں پر نوشہ
چوم لیتا ہے قدم بڑھ کے وہیں پر سہرا
آج تکمیل تمنا ہے مبارک ہو تمہیں
بھائی کہتے ہیں یہی رخ سے ہٹا کر سہرا
جس طرح آج ہے مہکا یا مشامِ جاں کو
زیست مہکاتا رہے یوں ہی برابر سہرا
راحت قلب و نظر آج ہوا ہے جیسے
پیش کرتا رہے تا عمر یہ منظر سہرا
گرچہ حسّان ہمیں کوئی بھی دعویٰ تو نہیں
رنگ غالب میں مگر لائے ہیں لکھ کر سہرا
(۱۷ جنوری ۲۰۱۸ء)

...
مزید تازہ ترین

پسندیدہ شاعری  

مزید پسندیدہ