پارۂ دل  

چمن کا رنگ ہے دورِ خزاں میں

چمن کا رنگ ہے دورِ خزاں میں
سکون دل نہاں درد نہاں میں
چمک جو گرد کوئے یار میں ہے
کہاں وہ بات مہر ضوفشاں میں
نہ پوچھو شادمانی باغباں کی
لگی ہے آگ میرے آشیاں میں
نہ چھیڑو نغمۂ الفت نہ چھیڑو
ابھی الجھا ہوں میں دورزماں میں
جھکاؤں گا نہیں سر دیکھنا ہے
کشِش کتنی ہے ان کے آستاں میں
قفس جن سے بنا ہے آج میرا
یہی تو تیلیاں تھیں آشیاں میں
یہ مانا سن تو لو گے داستاں تم
سنا نے کی نہیں طاقت زباں میں
بہاریں سرفگندہ نقش پا پر
چلے اس شان سے وہ گلستاں میں
اگر ہے دیکھنا ان کو تو دیکھو
مری آنکھوں کے ان اشک رواں میں
گرج سے بجلیوں کی ڈرنے والے
نشیمن ہے مرا برق تپاں میں
گماں اخؔتر ہوا انکی گلی میں
پہنچ آیا ہوں میں باغ جناں میں

...

آج بے سایہ ہیں مالک تھے جو ایوانوں کے

آج بے سایہ ہیں مالک تھے جو ایوانوں کے
ان میں جا بیٹھے ہیں فرزند بیا بانوں کے
خامشی تیری ہوئی حوصلہ افزائے جنوں
سامنے ڈھیر ہیں ٹوٹے ہوئے پیمانوں کے
زلف ژولیدۂ محبوب کے بوسے لیتے
ہوتے دندان زہے بخت اگر شانوں میں
بے حجابانہ ہے کس ہوش رُبا کی آمد
جلوۂ شمع سے دل بھر گئے پروانوں کے
آمد رشک قمر نازشِ خورشید ہے آج
جگمگا اٹھے مقدر ہیں شبستانوں کے
سن اے آلام شدائد سے ڈرانے والے
عشق تو کھیلتا ہے ساتھ میں طوفانوں کے
نظم میخانہ کی اب خیر نہیں ہے ساقی
آج دشمن ہوئے دیوانے ہی دیوانوں کے
ان کی محفل میں یہ غیروں کی رسائی کیسی
ہم نشیں کیا یہی انجام ہیں پیمانوں کے
شمع امید فروزاں تھی جہاں سے اخؔتر
اسی محفل میں گلے کٹ گئے ارمانوں کے

...

دل کے داغوں کو شرربار کروں یا نہ کروں

دل کے داغوں کو شرربار کروں یا نہ کروں
آپ کو یاد پھر اک بار کروں یا نہ کروں
محفل شمع نظر آتی ہے سونی سونی
شکوۂ روئے پر انوار کروں یا نہ کروں
عشق افسانوں میں محدود نہ رہ جائے کہیں
اپنے دل کو میں سردار کروں یا نہ کروں
بزم میں ان کی اندھیرا ہے الٰہی اندھیر
اپنے اشکوں کو ضیابار کروں یا نہ کروں
کون سنتا ہے مرے غم کا فسانہ امروز
ہمنشیں جرأت گفتار کروں یا نہ کروں
دم آخر بھی نہ آئیں وہ یہاں پر شاید
آنکھ کو طالب دیدار کروں یا نہ کروں
چکھ لیا میں نے مزہ پھول کی رنگینی کا
آرزوئے خلش خار کروں یا نہ کروں
دیکھا جاتا نہیں انداز غرور اے اخؔتر
حسن کے لطف سے انکار کروں یا نہ کروں

...

جب یاد تیری آئی ہے پہلو میں درد بن کے

جب یاد تیری آئی ہے پہلو میں درد بن کے
جھونکے برے لگے ہیں پھر نکہت چمن کے
پھر کیسے مسکرائیں یہ ننھی ننھی کلیاں
جب باغباں ہے گلچیں حق میں گل چمن کے
اس وقت کیا کریں گے ہم جبکہ اے ستمگر
یادیں تمہاری آئیں ہر جوڑ سے بدن کے
کھاتا رہا میں دھوکا آزادیوں کا ہمدم
آئے قفس میں جھونکے جب جب مرے چمن کے
کوئی ادا بھی ہوگی اب کارگر نہ مجھ پر
میں نے سمجھ لئے ہیں انداز پُرفتن کے
اخؔتر تری غزل میں تابائی ہنر ہے
تم بھی ہو اک ستارے آفاق اہل فن کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

...

پھر رہا ہوں تری یاد ہر سولئے

پھر رہا ہوں تری یاد ہر سولئے
دل معطر ہے خوشبوئے گیسولئے
تو نے اشک عنادل سے سیکھی ہنسی
میں نے گل کے تبسم سے آنسو لئے
آج خوش خوش نسیم سحرچار سو
پھر رہی ہے تری زلف کی بولئے
بھول جاؤں میں یہ مجھ سے ممکن نہیں
آپ کو بھولنا ہو اگر بھولئے
جس طرف اٹھ گئیں قسمتیں پھر گئیں
تیری آنکھیں بھی ہیں ایک جادو لئے
یہ گماں دیکھ کر ان کو اخؔتر ہوا
مہرباں آگیا تیغِ آبرو لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

...

یہ راز ہے جو ملتے ہیں سب سے خوشی سے ہم

یہ راز ہے جو ملتے ہیں سب سے خوشی سے ہم
دل میں غبار رکھتے نہیں ہیں کسی سے ہم
تیرے کرم کا تیری عنایت کا شکریہ
مانوس ہو چلے ہیں کچھ اب زندگی سے ہم
یہ بھی ہے ایک پیار کا انداز دلنواز
اندوہگیں نہیں ہیں تری بےرخی سے ہم
ہرشئ فنا پذیر عدم رو ہے ہم نشیں
کیوں خوف کھائیں عشق میں تیرہ شبی سے ہم
ہرسمت شمع سوزِ دروں سے ہے روشنی
کیوں خوف کھائیں بڑھتی ہوئی تیرگی سے ہم
رنگینئ مجاز حقیقت نما ہوئی
منزل پہ پہونچے سلسلۂ عاشقی سے ہم
ابوب ناامیدی کی اڑجائیں دھجیاں
گر کام لیں امید کے نقش جلی سے ہم
اخؔتر ہیں تجھ پہ خاص عنایات والتفات
الجھے پڑے ہوئے ہیں یہاں بیکسی سے ہم

...

نغمہ زا زندگی کا تار نہ ہو

نغمہ زا زندگی کا تار نہ ہو
خندہ زن چشم اشکبار نہ ہو
سوچتا ہوں تو کانپ جاتا ہوں
بیقراری کہیں قرار نہ ہو
زندگی بے قرار رہتی ہے
سایۂ زلف مشکبار نہ ہو
قبل محشر نہ حشر ہوجائے
جلوۂ یار آشکار نہ ہو
محفل ناز میں ہے آپہونچا
دل کہیں آج داغدار نہ ہو
کوئے جاناں میں جاکے اے ناصح
یہ تو ممکن نہیں شکار نہ ہو
جس کو خورشید لوگ کہتے ہیں
وہ کہیں نقش پائے یار نہ ہو
ذرے ذرے میں شان اخؔتر ہے
یہ کہیں خاکِ کوئے یار نہ ہو

...

سوئے گلشن ابر اٹھتا ہے کہ اٹھتا ہے دھواں

سوئے گلشن ابر اٹھتا ہے کہ اٹھتا ہے دھواں
دیکھئے جلتا نہ ہو شاید ہمارا آشیاں
کس طرح ہو پھر تمیز مہرباں، نامہرباں
پھر رہے ہیں سوبسو گلچیں بشکل باغباں
پھر ہمیں پہ ہے یہ کیوں الزام فریاد و فغاں
کس کو حاصل ہے جہاں میں ساعتِ امن و اماں
کاروانِ کفر و ایماں راہ میں بھٹکا کئے
اور مجھ کو مل گیا ہے اپنی منزل کا نشاں
چشم حیراں نے جو دیکھا دفعتہً چہرہ ترا
سمجھا، گیتی پر اُتر آیا ہے خورشید جہاں
کا کل پر پیچ میں ان کے تلاشی لیجئے
میرے پہلو میں کہاں ہے میرا دل اے ہم زباں
تھا کبھی شیریں زبانی کا ترے چرچا مگر
تو نے خود بدلا ہے اخؔتر اپنا اندازِ بیاں

...

ادائے بے رُخی نے مار ڈالا

ادائے بے رُخی نے مار ڈالا
تری فتنہ گری نے مار ڈالا
ترا طرز بیاں اللہ رے توبہ
تکلم کی لڑی نے مار ڈالا
سکونِ خاطر غمگیں کہاں ہے
گلوں کی تازگی نے مار ڈالا
وصال یار شاید ہو میسّر
فراق دائمی نے مار ڈالا
جمال روئے روشن اللہ اللہ
تری جلوہ گری نے مار ڈالا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

...